1. دار الافتاء الاخلاص کراچی
  2. اذکار ودعائیں

سفر کی دعا

سوال

مفتی صاحب! سفر کی دعا بتادیں۔

جواب

جب سفر کے لیے نکلیں، تو یہ دعا پڑھیں:

‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ إِنِّي أَسْأَلُكَ فِي سَفَرِنَا هَذَا الْبِرَّ وَالتَّقْوَى وَمِنَ الْعَمَلِ مَا تَرْضَى، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ هَوِّنْ عَلَيْنَا سَفَرَنَا هَذَا، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ اطْوِ لَنَا الْبُعْدَ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ أَنْتَ الصَّاحِبُ فِي السَّفَرِ وَالْخَلِيفَةُ فِي الْأَهْلِ وَالْمَالِ، اللَّهُمَّ إِنِّي أَعُوذُ بِكَ مِنْ وَعْثَاءِ السَّفَرِ وَكَآبَةِ الْمُنْقَلَبِ وَسُوءِ الْمَنْظَرِ فِي الْأَهْلِ وَالْمَالِ.

ترجمہ: اے اللہ! میں اپنے اس سفر میں تجھ سے نیکی، تقویٰ اور وہ پسندیدہ اعمال جس سے تو راضی ہوتا ہے، کا سوال کرتا ہوں، اے اللہ! ہمارے اس سفر کو ہمارے لیے آسان فرما دے، اے اللہ! ہمارے لیے مسافت کو لپیٹ دے، اے اللہ! تو ہی رفیقِ سفر ہے، اور تو ہی اہل و عیال اور مال میں میرا قائم مقام ہے۔
اے اللہ ! میں تجھ سے سفر کی پریشانیوں سے اور غمگین و ناکام ہو کر لوٹنے سے اور لوٹ کر اہل اور مال میں برے منظر (دیکھنے سے) سے پناہ مانگتا ہوں۔

(سنن لابی داؤد، باب ما یقول الرجل اذا سافر، رقم الحدیث : 2599/2598)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی السنن لابی داؤد:

حَدَّثَنَا الْحَسَنُ بْنُ عَلِيٍّ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا عَبْدُ الرَّزَّاقِ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنَا ابْنُ جُرَيْجٍ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَنِي أَبُو الزُّبَيْرِ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ عَلِيًّا الأَزَدِيَّ، ‏‏‏‏‏‏أَخْبَرَهُ أَنَّ ابْنَ عُمَرَ عَلَّمَهُ، ‏‏‏‏‏‏أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ:‏‏‏‏ كَانَ إِذَا اسْتَوَى عَلَى بِعِيرِهِ خَارِجًا إِلَى سَفَرٍ كَبَّرَ ثَلَاثًا ثُمَّ قَالَ:‏‏‏‏ سُبْحَانَ الَّذِي سَخَّرَ لَنَا هَذَا وَمَا كُنَّا لَهُ مُقْرِنِينَ ‏‏‏‏ 13 ‏‏‏‏ وَإِنَّا إِلَى رَبِّنَا لَمُنْقَلِبُونَ ‏‏‏‏ 14 ‏‏‏‏ سورة الزخرف آية 13-14، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ إِنِّي أَسْأَلُكَ فِي سَفَرِنَا هَذَا الْبِرَّ وَالتَّقْوَى وَمِنَ الْعَمَلِ مَا تَرْضَى، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ هَوِّنْ عَلَيْنَا سَفَرَنَا هَذَا، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ اطْوِ لَنَا الْبُعْدَ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ أَنْتَ الصَّاحِبُ فِي السَّفَرِ وَالْخَلِيفَةُ فِي الْأَهْلِ وَالْمَالِ، ‏‏‏‏‏‏وَإِذَا رَجَعَ قَالَهُنَّ وَزَادَ فِيهِنَّ آيِبُونَ تَائِبُونَ عَابِدُونَ لِرَبِّنَا حَامِدُونَ، ‏‏‏‏‏‏وَكَانَ النَّبِيُّ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَجُيُوشُهُ إِذَا عَلَوْا الثَّنَايَا كَبَّرُوا وَإِذَا هَبَطُوا سَبَّحُوا فَوُضِعَتِ الصَّلَاةُ عَلَى ذَلِكَ.

وفیہ ایضاً:

حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا يَحْيَى، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنَا مُحَمَّدُ بْنُ عَجْلَانَ، ‏‏‏‏‏‏حَدَّثَنِي سَعِيدٌ الْمَقْبُرِيُّ، ‏‏‏‏‏‏عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ كَانَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ إِذَا سَافَرَ قَالَ:‏‏‏‏ اللَّهُمَّ أَنْتَ الصَّاحِبُ فِي السَّفَرِ وَالْخَلِيفَةُ فِي الْأَهْلِ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ إِنِّي أَعُوذُ بِكَ مِنْ وَعْثَاءِ السَّفَرِ وَكَآبَةِ الْمُنْقَلَبِ وَسُوءِ الْمَنْظَرِ فِي الْأَهْلِ وَالْمَالِ، ‏‏‏‏‏‏اللَّهُمَّ اطْوِ لَنَا الْأَرْضَ وَهَوِّنْ عَلَيْنَا السَّفَرَ.

(سنن لابی داؤد، باب ما یقول الرجل اذا سافر، رقم الحدیث : 2599/2598، دار ابن حزم)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی


ماخذ :دار الافتاء الاخلاص کراچی
فتوی نمبر :6427


فتوی پرنٹ