1. دار الافتاء الاخلاص کراچی
  2. اذکار ودعائیں

حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ کو صبح، شام اور سونے کی دعا کی تعلیم

سوال

مفتی صاحب ! کوئی ایسی دعا ارشاد فرمادیں، جس کو صبح اور شام کے ساتھ رات کو بھی پڑھ سکتے ہوں۔

جواب

حضرت ابو بکر صدیق رضی اللہ عنہ نے نبی پاک صلی اللہ علیہ وسلم سے عرض کیا کہ مجھے ایسی دعا بتادیجیئے، جسے میں صبح و شام پڑھ لیا کروں، آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: جب تم صبح یا شام کرو، یا سونے کے لیے جاؤ، تو یہ دعا پڑھ لیا کرو:

اللَّهُمَّ فَاطِرَ السَّمَوَاتِ وَالْأَرْضِ، عَالِمَ الْغَيْبِ وَالشَّهَادَةِ، رَبَّ كُلِّ شَيْءٍ وَمَلِيكَهُ، أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا أَنْتَ، أَعُوذُ بِكَ مِنْ شَرِّ نَفْسِي، وَشَرِّ الشَّيْطَانِ وَشِرْكِهِ۔

ترجمہ: اے اللہ ! آسمانوں اور زمین کے پیدا کرنے والے، چھپی اور ظاہری چیزوں کے جاننے والے، ہر چیز کے پروردگار اور مالک، میں گواہی دیتا ہوں کہ آپ کے سوا کوئی معبود نہیں، اور میں اپنے نفس کے شر سے، اور شیطان کے شر سے، اور اس کے شرک کی برائی سے پناہ مانگتا ہوں۔

(سنن لابی داؤد، باب ما یقول اذا اصبح، رقم الحدیث: 5067)

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی السنن لابی داؤد:

حَدَّثَنَا مُسَدَّدٌ، حَدَّثَنَا هُشَيْمٌ، عَنْ يَعْلَى بْنِ عَطَاءٍ، عَنْ عَمْرِو بْنِ عَاصِمٍ، عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ، أَنَّ أَبَا بَكْرٍ الصِّدِّيقَ رَضِيَ اللَّهُ عَنْهُ، قَالَ: يَا رَسُولَ اللَّهِ ، مُرْنِي بِكَلِمَاتٍ أَقُولُهُنَّ إِذَا أَصْبَحْتُ وَإِذَا أَمْسَيْتُ قال : قُلْ: اللَّهُمَّ فَاطِرَ السَّمَوَاتِ وَالْأَرْضِ، عَالِمَ الْغَيْبِ وَالشَّهَادَةِ، رَبَّ كُلِّ شَيْءٍ وَمَلِيكَهُ، أَشْهَدُ أَنْ لَا إِلَهَ إِلَّا أَنْتَ، أَعُوذُ بِكَ مِنْ شَرِّ نَفْسِي، وَشَرِّ الشَّيْطَانِ وَشِرْكِهِ ، قَالَ : قُلْهَا : إِذَا أَصْبَحْتَ ، وَإِذَا أَمْسَيْتَ ، وَإِذَا أَخَذْتَ مَضْجَعَكَ.

(سنن لابی داؤد، باب ما یقول اذا اصبح، رقم الحدیث: 5067، دار ابن حزم)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی


ماخذ :دار الافتاء الاخلاص کراچی
فتوی نمبر :6396


فتوی پرنٹ