1. دار الافتاء الاخلاص کراچی
  2. میت و جنازہ

تدفین کے وقت میت میں ظاہر ہونے والے عیب کو بیان کرنا

سوال

میرے ایک رشتہِ دار کا انتقال چند دن پہلے ہوا، جو رشتہ دار جنازے میں شریک نہ ہو سکے تھے انہونے نے مجھ سے میت کے بارے میں سوال کیے، تو میں نے بتایا کہ دفناتے وقت جب میت کا چہرہ دیکھا، تو وہ بلکل سیاہ تھا اور حقیقت میں بھی ایسا ہی تھا، کیا میں نے یہ کہہ کر غلط کیا؟

جواب

واضح رہے کہ میت کے عیب کو ظاہر کرنا، شرعاً غیبت کے حکم میں ہے، اس لئے ایسا کرنا جائز نہیں ہے، لہذا اپنے کئے ہوئے کام پر آپ کو توبہ کرنی چاہیے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کما فی السنن الترمذی:

حَدَّثَنَا أَبُو كُرَيْبٍ، حَدَّثَنَا مُعَاوِيَةُ بْنُ هِشَامٍ، عَنْ عِمْرَانَ بْنِ أَنَسٍ الْمَكِّيِّ، عَنْ عَطَاءٍ، عَنْ ابْنِ عُمَرَ، أَنَّ رَسُولَ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ اذْكُرُوا مَحَاسِنَ مَوْتَاكُمْ وَكُفُّوا عَنْ مَسَاوِيهِمْ . قَالَ أَبُو عِيسَى:‏‏‏‏ هَذَا حَدِيثٌ غَرِيبٌ، ‏‏‏‏‏‏قَالَ:‏‏‏‏ سَمِعْت مُحَمَّدًا، ‏‏‏‏‏‏يَقُولُ:‏‏‏‏ عِمْرَانُ بْنُ أَنَسٍ الْمَكِّيُّ مُنْكَرُ الْحَدِيثِ، ‏‏‏‏‏‏وَرَوَى بَعْضُهُمْ عَنْ عَطَاءٍ، عَنْ عَائِشَةَ، قَالَ:‏‏‏‏ وَعِمْرَانُ بْنُ أَبِي أَنَسٍ مِصْرِيٌّ أَقْدَمُ وَأَثْبَتُ مِنْ عِمْرَانَ بْنِ أَنَسٍ الْمَكِّيِّ.

(رقم الحدیث:1019)

لما فی الشامیۃ:

وینبغي للغاسل ولمن حضر إذا رأی ما یجب سترہ أن یسترہ ولا یحدث بہ لأنہ غیبۃ وکذا إذا کان عیباً حادثاً کسواد وجہٍ ونحوہ۔

(شامي / باب صلاۃ الجنازۃ ۳؍۹۵ زکریا)


واللہ تعالی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی


ماخذ :دار الافتاء الاخلاص کراچی
فتوی نمبر :6491


فتوی پرنٹ