1. دار الافتاء الاخلاص کراچی
  2. میت و جنازہ

دفناتے وقت میت کا چہرہ دکھانا

سوال

کیا میت کے چہرے کو قبرستان میں دفناتے وقت دکھانا چاہیے؟

جواب

حدیث میں نمازِ جنازہ کی ادائیگی کے بعد میت کو جلد دفن کرنے کا حکم وارد ہوا ہے، نمازِ جنازہ کے بعد چہرہ دکھانے سے کسی قدر تاخیر لازم آتی ہے، بسا اوقات برزخ کے آثار شروع ہوجانے کی وجہ سے میت میں تغیر آجاتا ہے، جس میں ایک مسلمان کے عیب کا افشاء کا خطرہ ہے، ان وجوہات کی بنا پر تدفین کے وقت چہرہ دکھانا بہتر نہیں ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

لما فی الشامیۃ:

"(قوله: ويسرع في جهازه)؛ لما رواه أبو داود «عنه صلى الله عليه وسلم لما عاد طلحة بن البراء وانصرف، قال: ما أرى طلحة إلا قد حدث فيه الموت، فإذا مات فآذنوني حتى أصلي عليه، وعجلوا به؛ فإنه لا ينبغي لجيفة مسلم أن تحبس بين ظهراني أهله». والصارف عن وجوب التعجيل الاحتياط للروح الشريفة؛ فإنه يحتمل الإغماء".

(ج:2، ص:193)

وفي الہندیة:

ویبادر إلی تجہیزہ ولا یوٴخر

(ج:1، ص:157)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی


ماخذ :دار الافتاء الاخلاص کراچی
فتوی نمبر :6449


فتوی پرنٹ