1. دار الافتاء الاخلاص کراچی
  2. نماز

کیا وتر ایک الگ نماز ہے؟

سوال

مفتی صاحب ! وتر عشاء کی نماز میں شامل ہیں یا وتر الگ نماز ہے؟ نیز اس کی نیت کیسے کریں؟

جواب

جی ہاں! وتر ایک مستقل نماز ہے، یہ فرض کے تابع نہیں ہے، لیکن عشاء اور وتر میں ترتیب پھر بھی لازم ہے، لہذا وتر کو عشاء کی نماز سے پہلے ادا کرنا صحیح نہیں ہے۔

(2) نیت کے واسطے دل سے یہ ارادہ کرلینا کافی ہے کہ میں وتر کی نماز ادا کر رہا ہوں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دلائل:

کما فی المشکوٰۃ المصابیح:

وَعَن خَارِجَة بن حذافة قَالَ: خَرَجَ عَلَيْنَا رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ وَقَالَ: إِنَّ اللَّهَ أَمَدَّكُمْ بِصَلَاةٍ هِيَ خَيْرٌ لَكُمْ مِنْ حُمْرِ النِّعَمِ: الْوَتْرُ جَعَلَهُ اللَّهُ لَكُمْ فِيمَا بَيْنَ صَلَاةِ الْعِشَاءِ إِلَى أَنْ يَطْلُعَ الْفَجْرُ . رَوَاهُ التِّرْمِذِيُّ وَأَبُو دَاوُد

(رقم الحدیث:1267)
واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی


ماخذ :دار الافتاء الاخلاص کراچی
فتوی نمبر :6510


فتوی پرنٹ