1. دار الافتاء الاخلاص کراچی
  2. میت و جنازہ

میت کے سرہانے بیٹھ کر یا قبرستان لے جاتے کلمہ پڑھنے کا شرعی حکم

سوال

میت کی چارپائی کے پاس بیٹھ کر کلمہ طیبہ بلند آواز سے پڑھنا یا میت کو قبرستان کی طرف لے جاتے وقت کلمہ طیبہ پڑھنا کیسا ہے؟

جواب

دونوں حالتوں میں کلمہ طیبہ پڑھنا درست ہے، مگر اس کو لازم اور ضروری نہ سمجھا جائے، اور بلند آواز سے نہ پڑھا جائے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی الدرالمختار ورد المحتار :

ﻛﺮﻩ ﻓﻴﻬﺎ ﺭﻓﻊ ﺻﻮﺕ ﺑﺬﻛﺮ ﺃﻭ ﻗﺮاءﺓ.

ﻗﻮﻟﻪ: (ﻛﻤﺎ ﻛﺮﻩ ﺇﻟﺦ): ﻗﻴﻞ: ﺗﺤﺮﻳﻤﺎ، ﻭﻗﻴﻞ: ﺗﻨﺰﻳﻬﺎ، ﻛﻤﺎ ﻓﻲ اﻟﺒﺤﺮ ﻋﻦ اﻟﻐﺎﻳﺔ. ﻭﻓﻴﻪ ﻋﻨﻬﺎ: ﻭﻳﻨﺒﻐﻲ ﻟﻤﻦ ﺗﺒﻊ اﻟﺠﻨﺎﺯﺓ ﺃﻥ ﻳﻄﻴﻞ اﻟﺼﻤﺖ. ﻭﻓﻴﻪ ﻋﻦ اﻟﻈﻬﻴﺮﻳﺔ: ﻓﺈﻥ ﺃﺭاﺩ ﺃﻥ ﻳﺬﻛﺮ اﻟﻠﻪ ﺗﻌﺎﻟﻰ ﻳﺬﻛﺮﻩ ﻓﻲ ﻧﻔﺴﻪ {ﺇﻧﻪ ﻻ ﻳﺤﺐ اﻟﻤﻌﺘﺪﻳﻦ} [ اﻷﻋﺮاﻑ: 55] :
ﺃﻱ اﻟﺠﺎﻫﺮﻳﻦ ﺑﺎﻟﺪﻋﺎء. ﻭﻋﻦ ﺇﺑﺮاﻫﻴﻢ ﺃﻧﻪ ﻛﺎﻥ ﻳﻛﺮﻩ ﺃﻥ ﻳﻘﻮﻝ اﻟﺮﺟﻞ ﻭﻫﻮ ﻳﻤﺸﻲ ﻣﻌﻬﺎ: اﺳﺘﻐﻔﺮﻭا ﻟﻪ ﻏﻔﺮ اﻟﻠﻪ ﻟﻜﻢ. اﻩـ. ﻗﻠﺖ: ﻭﺇﺫا ﻛﺎﻥ ﻫﺬا ﻓﻲ اﻟﺪﻋﺎء ﻭاﻟﺬﻛﺮ ﻓﻤﺎ ﻇﻨﻚ ﺑﺎﻟﻐﻨﺎء اﻟﺤﺎﺩﺙ ﻓﻲ ﻫﺬا اﻟﺰﻣﺎﻥ۔

(ج : 2، ص : 233، ط : دارالفکر )

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی

مزید سوالات و جوابات کیلئے ملاحظہ فرمائیں)
http://AlikhlasOnline.com


ماخذ :دار الافتاء الاخلاص کراچی
فتوی نمبر :5550


فتوی پرنٹ