1. دار الافتاء الاخلاص کراچی
  2. نماز

نماز کے سجدے میں دعائیں مانگنے کا حکم

سوال

مفتی صاحب ! ہم نماز کے ہر سجدے میں تین مرتبہ سبحان ربی الاعلی پڑھنے کے بعد والدین کے لیے رَبِّ ارْحَمْهُمَا كَمَا رَبَّيَانِيْ صَغِيْرَا‏ پڑھ سکتے ہیں؟ اصل مقصد والدین کے لیے دعاء خیر کرنی ہے۔

جواب

واضح رہے کہ نفل نماز کے سجدوں میں ماثور ( قرآن وحدیث سے ثابت شدہ) دعائیں مانگنا بہتر اور مستحب ہے، اسی طرح اگر کوئی شخص اکیلے فرض، واجب یا سنت نماز پڑھ رہا ہو، تب بھی یہی حکم ہے۔

البتہ امام کو چاہیے کہ وہ فرض نماز کے سجدے میں صرف مسنون تسبیحات پر اکتفا کرے، کیونکہ مسنون تسبیحات کے بعد ماثور دعائیں پڑھنے میں نماز کے طویل ہونے کا خدشہ ہے، جس سے حدیث میں ممانعت وارد ہوئی ہے، لیکن اگر مقتدی حضرات کی چاہت ہو یا ان پر بوجھ نہ ہو، تو امام کے لیے فرض نماز میں بھی ماثور دعائیں پڑھنا درست ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دلائل:

کذا فی صحیح البخاری :

ﺣﺪﺛﻨﺎ ﻣﺤﻤﺪ ﺑﻦ ﻛﺜﻴﺮ، ﻗﺎﻝ: ﺃﺧﺒﺮﻧﺎ ﺳﻔﻴﺎﻥ، ﻋﻦ اﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﺧﺎﻟﺪ، ﻋﻦ ﻗﻴﺲ ﺑﻦ ﺃﺑﻲ ﺣﺎﺯﻡ، ﻋﻦ ﺃﺑﻲ ﻣﺴﻌﻮﺩ اﻷﻧﺼﺎﺭﻱ ﻗﺎﻝ: ﻗﺎﻝ ﺭﺟﻞ ﻳﺎ ﺭﺳﻮﻝ اﻟﻠﻪ، ﻻ ﺃﻛﺎﺩ ﺃﺩﺭﻙ اﻟﺼﻼﺓ ﻣﻤﺎ ﻳﻄﻮﻝ ﺑﻨﺎ ﻓﻼﻥ، ﻓﻤﺎ ﺭﺃﻳﺖ اﻟﻨﺒﻲ ﺻﻠﻰ اﻟﻠﻪ ﻋﻠﻴﻪ ﻭﺳﻠﻢ ﻓﻲ ﻣﻮﻋﻈﺔ ﺃﺷﺪ ﻏﻀﺒﺎ ﻣﻦ ﻳﻮﻣﺌﺬ، ﻓﻘﺎﻝ: «أﻳﻬﺎ اﻟﻨﺎﺱ، ﺇﻧﻜﻢ ﻣﻨﻔﺮﻭﻥ، ﻓﻤﻦ ﺻﻠﻰ ﺑﺎﻟﻨﺎﺱ ﻓﻠﻴﺨﻔﻒ، ﻓﺈﻥ ﻓﻴﻬﻢ اﻟﻤﺮﻳﺾ، ﻭاﻟﻀﻌﻴﻒ، ﻭﺫا اﻟﺤﺎﺟﺔ.

(رقم الحديث : 90، ط: دار طوق النجاة)

کذا في شرح النووي علي المسلم :

ﻭﺇﻧﻤﺎ ﻳﺴﺘﺤﺐ اﻟﺠﻤﻊ ﺑﻴﻨﻬﻤﺎ ﻟﻐﻴﺮ اﻹﻣﺎﻡ ﻭﻟﻹﻣﺎﻡ اﻟﺬﻱ ﻳﻌﻠﻢ ﺃﻥ اﻟﻤﺄﻣﻮﻣﻴﻦ ﻳﺆﺛﺮﻭﻥ اﻟﺘﻄﻮﻳﻞ ﻓﺈﻥ ﺷﻚ ﻟﻢ ﻳﺰﺩ ﻋﻠﻰ اﻟﺘﺴﺒﻴﺢ.

(ج:4، ص :97، ط : دار احیاء التراث العربی)

کذا فی حاشیۃ الطحطاوی :

ﻭﻻ ﻳﺰﻳﺪ اﻹﻣﺎﻡ ﻋﻠﻰ ﻭﺟﻪ ﻳﻤﻞ ﺑﻪ اﻟﻘﻮﻡ، ﻭﻛﻠﻤﺎ ﺯاﺩ اﻟﻤﻨﻔﺮﺩ ﻓﻬﻮ ﺃﻓﻀﻞ ﺑﻌﺪ اﻟﺨﺘﻢ ﻋﻠﻰ ﻭﺗﺮ.

(ج :1، ص:266، ط: دار الکتب العلمیۃ)

کذا فی البحر الرائق :

ﻭﻳﺴﺘﺤﺐ ﺃﻥ ﻳﺨﺘﻢ ﻋﻠﻰ ﻭﺗﺮ ﺧﻤﺲ ﺃﻭ ﺳﺒﻊ ﺃﻭ ﺗﺴﻊ ﻟﺤﺪﻳﺚ اﻟﺼﺤﻴﺤﻴﻦ «ﺇﻥ اﻟﻠﻪ ﻭﺗﺮ ﻳﺤﺐ اﻟﻮﺗﺮ» ﻭﻻ ﻳﻨﺒﻐﻲ ﻟﻹﻣﺎﻡ ﺃﻥ ﻳﻄﻴﻞ ﻋﻠﻰ ﻭﺟﻪ ﻳﻤﻞ اﻟﻘﻮﻡ؛ ﻷﻧﻪ ﺳﺒﺐ ﻟﻠﺘﻨﻔﻴﺮ ﻭﺃﻧﻪ ﻣﻜﺮﻭﻩ۔

(ج : 1، ص: 334، ط : دار الکتاب الاسلامی)

کذا فی الدر المختار وردالمحتار :

ﻭﻛﺬا ﻻ ﻳﺄﺗﻲ ﻓﻲ ﺭﻛﻮﻋﻪ ﻭﺳﺠﻮﺩﻩ ﺑﻐﻴﺮ اﻟﺘﺴﺒﻴﺢ (ﻋﻠﻰ اﻟﻤﺬﻫﺐ) ﻭﻣﺎ ﻭﺭﺩ ﻣﺤﻤﻮﻝ ﻋﻠﻰ اﻟﻨﻔﻞ۔

قولہ :(محمول ﻋﻠﻰ اﻟﻨﻔﻞ) ﺃﻱ ﺗﻬﺠﺪا ﺃﻭ ﻏﻴﺮﻩ ﺧﺰاﺋﻦ. ﻭﻛﺘﺐ ﻓﻲ ﻫﺎﻣﺸﻪ: ﻓﻴﻪ ﺭﺩ ﻋﻠﻰ اﻟﺰﻳﻠﻌﻲ ﺣﻴﺚ ﺧﺼﻪ ﺑﺎﻟﺘﻬﺠﺪ. اﻩـ. ﺛﻢ اﻟﺤﻤﻞ اﻟﻤﺬﻛﻮﺭ ﺻﺮﺡ ﺑﻪ اﻟﻤﺸﺎﻳﺦ ﻓﻲ اﻟﻮاﺭﺩ ﻓﻲ اﻟﺮﻛﻮﻉ ﻭاﻟﺴﺠﻮﺩ، ﻭﺻﺮﺡ ﺑﻪ ﻓﻲ اﻟﺤﻠﻴﺔ ﻓﻲ اﻟﻮاﺭﺩ ﻓﻲ اﻟﻘﻮﻣﺔ ﻭاﻟﺠﻠﺴﺔ ﻭﻗﺎﻝ ﻋﻠﻰ ﺃﻧﻪ ﺇﻥ ﺛﺒﺖ ﻓﻲ اﻟﻤﻜﺘﻮﺑﺔ ﻓﻠﻴﻜﻦ ﻓﻲ ﺣﺎﻟﺔ اﻻﻧﻔﺮاﺩ، ﺃﻭ اﻟﺠﻤﺎﻋﺔ ﻭاﻟﻤﺄﻣﻮﻣﻮﻥ ﻣﺤﺼﻮﺭﻭﻥ ﻻ ﻳﺘﺜﻘﻠﻮﻥ ﺑﺬﻟﻚ ﻛﻤﺎ ﻧﺺ ﻋﻠﻴﻪ اﻟﺸﺎﻓﻌﻴﺔ، ﻭﻻ ﺿﺮﺭ ﻓﻲ اﻟﺘﺰاﻣﻪ ﻭﺇﻥ ﻟﻢ ﻳﺼﺮﺡ ﺑﻪ ﻣﺸﺎﻳﺨﻨﺎ ﻓﺈﻥ اﻟﻘﻮاﻋﺪ اﻟﺸﺮﻋﻴﺔ ﻻ ﺗﻨﺒﻮ ﻋﻨﻪ، ﻛﻴﻒ ﻭاﻟﺼﻼﺓ ﻭاﻟﺘﺴﺒﻴﺢ ﻭاﻟﺘﻜﺒﻴﺮ ﻭاﻟﻘﺮاءﺓ ﻛﻤﺎ ﺛﺒﺖ ﻓﻲ اﻟﺴﻨﺔ. اﻩـ.

(ج :1، ص :506، ط : دار الفکر)

کذا فی احسن الفتاوی :

(ج3، ص44، ط: ایچ ایم سعید کمپنی)

کذا فی فتاوی دارالافتاء دارالعلوم دیوبند: (رقم الفتوی : 28696)

واللہ تعالٰی اعلم بالصواب
دارالافتاء الاخلاص، کراچی


ماخذ :دار الافتاء الاخلاص کراچی
فتوی نمبر :8107


فتوی پرنٹ