1. دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
  2. حقوق و معاشرت
  3. نکاح / طلاق
  4. طلاق - وقوع اور عدم وقوع

میں نے طلاق دی بھی ہو، مجھے یاد نہ ہو، میں اللہ کے ہاں معاف ہوں کہنے کا حکم

سوال

ایک شخص نے کہا :"میں نے طلاق دی بھی ہو ، مجھے یاد نہ ہو ، میں اللہ کے ہاں معاف ہوں ،ایسا کہنے سے اس شخص کی طلاق واقع ہو گی یا نہیں؟

جواب

مذکورہ جملے سے طلاق واقع نہیں ہوتی ، البتہ اس طرح کی گفتگو سے بھی اجتناب کرنا چاہیے۔

فتاویٰ شامی میں ہے:

"وركنه لفظ مخصوص.(قوله: وركنه لفظ مخصوص) هو ما جعل دلالةً على معنى الطلاق من صريح أو كناية، فخرج الفسوخ على ما مر، وأراد اللفظ ولو حكمًا؛ ليدخل الكتابة المستبينة، وإشارة الأخرس، والإشارة إلى العدد بالأصابع في قوله: أنت طالق هكذا، كما سيأتي".

(كتاب الطلاق، ج:3، ص:230، ط:سعيد)

فقط والله أعلم


ماخذ :دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
فتوی نمبر :144311101037
تاریخ اجراء :14-06-2022

فتوی پرنٹ