1. دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
  2. حقوق و معاشرت
  3. باہمی حقوق
  4. اولاد کے حقوق

والدہ مرحومہ کے کپڑے تقسیم سے پہلے بیٹیوں کا لے لینا

سوال

میری امی کا تقریباً ایک ماہ پہلے انتقال ہوا ہے, ہم تین بہنیں ہیں، اور ہم تینوں نے ان کے کپڑے آپس میں بانٹ لیے ہیں کہ ہم انہیں پہن کر نماز پڑہیں گے تو امی کو بھی اس کا اجر ملے گا, اب چھوٹی بہن نے خواب میں دیکھا کہ امی اس پر ناراض ہیں کہ تم نے کپڑے کیوں لیے؟ جب کہ زندگی میں ہم کو  اپنی چیزیں دے کر خوش ہوتی تھیں۔ کیا ہم امی کے  کپڑے کسی اور کو دے دیں؟ کیوں کہ کسی سے سنا ہے کہ مردے کی چیزیں گھر والے استعمال نہیں کرتے۔

جواب

انسان کی وفات کے ساتھ ہی اس کی تمام مملوکہ اشیاء خواہ سونا چاندی، نقدی، کپڑے چپل وغیرہ سب اس کا ترکہ شمار ہوتا ہے، جس میں اس کے تمام شرعی ورثاء حصصِ شرعیہ کے بقدر  شریک ہوتے ہیں،  یہی حکم آپ کی والدہ کی تمام مملوکہ اشیاء (بشمول کپڑوں) کا بھی ہے کہ وہ ان کا ترکہ شمار ہوں گی، آپ حضرات نے چوں کہ تقسیمِ شرعی کے لحاظ سے ان کے کپڑے نہیں لیے ہیں،  اور معلوم ہوتاہے کہ اس تقسیم میں تمام ورثاء کی دلی رضامندی بھی شامل نہیں ہے؛ اس لیے آپ سب پر لازم ہے  کہ ان تمام کپڑوں کو ان کے ترکہ میں شامل کرکے شرعی حصص کے مطابق تقسیم کریں۔ مرحومہ کے ورثاء کی تفصیل بتاکر شرعی حصص معلوم کیے جاسکتے ہیں۔ 

 رہی بات محروم کے زیرِ استعمال سامان کے استعمال کی تو  ان تمام اشیاء پر ان کے ورثاء کا ہی حق ہوتا ہے، اور تقسیمِ شرعی کے بعد ان کا استعمال بھی جائز ہوتا ہے۔ آپ نے جو بات سنی ہے کہ مردے کی چیزیں گھر والے استعمال نہیں کرسکتے، یہ غلط ہے۔ فقط واللہ اعلم


ماخذ :دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
فتوی نمبر :144010200178
تاریخ اجراء :16-06-2019

فتوی پرنٹ