1. دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
  2. معاملات
  3. وراثت / وصیت
  4. ورثاء اور ان کے حصص

میراث میں بیٹےکو بیٹی سے دوگنا حصہ ملنے کی حکمت

سوال

میراث میں دو حصے بیٹے کے اور ایک حصہ بیٹی کا ہوتا ہے، اس تقسیم کی شرعی وجہ کیا ہے؟ 

جواب

میراث میں بیٹے کو بیٹی سے دوگنا حصہ ملنے کی وجہ کی طرف اشارہ خود قرآن کریم میں ہی (سورہ نساء :۳۲) میں مذکور ہے، اللہ تعالی کا ارشاد ہے:

{الرجال قوامون على النساء بما فضل الله بعضهم على بعض وبما أنفقوا من أموالهم} 

یعنی مرد، عورتوں کے ذمہ دار ہیں؛ اس لیے کہ اللہ نے ایک دوسرے پر بڑائی دی ہے، اور اس واسطے کہ انہوں نے اپنے مال خرچ کیے ہیں۔ اس بڑائی کا اثر میراث میں ظاہر ہوتا ہے۔

نیز مرد کو میراث میں زیادہ حصہ دینے کی وجہ یہ بھی ہے کہ وہ اہل وعیال  اور اموال وعزتوں کی حفاظت کرتا ہے اور ضرورت پڑنے پر جنگوں میں حصہ لیتا ہے،اور  مردوں پر اخراجات کا بوجھ بھی زیادہ ہوتا ہے، اس کے برعکس عورتوں پر نہ مصارف کا بوجھ ہوتا ہے اور نہ وہی وہ جنگوں میں شریک ہوتی ہیں ۔

مزید تفصیل کے لیے شاہ ولی اللہ محدث دہلوی رحمہ اللہ کی کتاب ’’حجۃ اللہ البالغۃ‘‘  اور اس کی اردو شرح رحمۃ اللہ الواسعۃ (از مفتی سعید احمد پالن پوری)کا مطالعہ کیجیے۔ فقط واللہ اعلم 


ماخذ :دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
فتوی نمبر :144102200282
تاریخ اجراء :26-10-2019

PDF ڈاؤن لوڈ