1. دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
  2. ممنوعات و مباحات
  3. تفریح / کھیل
  4. ٹی وی / وی سی آر / سینما / انٹرنیٹ/تصویر سازی

ارتغرل ڈراما دیکھنے کا حکم

سوال

کیا یہ ارتغرل سیریز دیکھنا جائز ہے اسلام کے رو سے؟

جواب

واضح رہے کہ شریعت میں کسی کام کے جائز ہونے کے لیے دو باتیں ضروری ہیں:

1۔  اس کام کا مقصد درست ہو یعنی شریعت کے خلاف نہ ہو ۔

2۔  اس مقصد کے لیے جو  ذریعہ استعمال کیا جائے وہ بھی درست ہو یعنی  شرعاً جائز ہو ۔

پس اگر کام   نیک مقصد والا ہو  مگر  اس کے حصول کا  سبب و طریقہ ناجائز ہو جیسا  کہ مذکورہ ڈراما، اگرچہ اس کا ظاہری مقصد اچھا ہے، لیکن چوں کہ خود ڈراما سازی (  جو کہ مقصد کا ذریعہ ہے، وہ) کئی ناجائز و حرام امور (جیسے تصویر کشی، مرد و زن کے اختلاط اور نامحرم کے دیکھنے) پر مشتمل ہے،  لہٰذا ان وجوہات کی بنا پر مذکورہ ڈراما دیکھنا اور اس کی تشہیر ناجائز ہے۔

باری تعالیٰ کا ارشاد ہے:

{ومن الناس من یشتري لهو الحدیث لیضل عن سبیل اللّٰه بغیر علم ویتخذها هزوا ، اولئک لهم عذاب مهین} [لقمٰن :۶]

بخاری شریف میں ہے:

"[عن] عبد الله قال: سمعت النبي ﷺ یقول: ’’إن أشد الناس عذاباً عند الله المصورون‘‘. (کتاب اللباس، باب عذاب المصورین یوم القیامة، ٢ / ٨٨٠)

الدرالمختار میں ہے:

"(و) كره (كل لهو) لقوله عليه الصلاة والسلام:  «كل لهو المسلم حرام إلا ثلاثة: ملاعبته أهله وتأديبه لفرسه ومناضلته بقوسه». (ج:۶  / ۳۹۵ ط:سعید) فقط والله أعلم


ماخذ :دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
فتوی نمبر :144109201912
تاریخ اجراء :11-05-2020

PDF ڈاؤن لوڈ