1. دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
  2. معاملات
  3. بیع / تجارت
  4. بیع صحیح ، فاسد اور باطل

مضاربت میں مال ہلاک ہونے کی صورت میں کیا ہوگا؟

سوال

اگر مضاربت میں مال ہلاک ہوجائے تو اس کا تاوان مضارب پر ہو گا یا رب المال پر, اور مال کا ہلاک ہونا کسے کہتے ہیں؟

جواب

مضاربت میں نقصان کی صورت میں ابتداءً اس نقصان کی تلافی نفع سے کی جائےگی، اگر نقصان نفع سے بھی زیادہ ہو تو پھر نفع کے بعد باقی نقصان کی تلافی اصل سرمائے سے کی جائے گی۔ اور اگر نفع ہونے سے پہلے ہی ابتدائی طور پر  نقصان ہوجائے تو  سرمایہ کار نقصان برداشت کرے گا اور  ان دونوں صورتوں میں مضارب کی محنت رائیگاں جائے گی، مضارب امین کی حیثیت سے کام کرے گا۔ ہلاک ہونے کا مطلب یہ ہے کہ کسی کی تعدی (زیادتی) کے بغیر مال ضائع ہوجائے مثلاً آفتِ سماوی سے۔

الدر المختار وحاشية ابن عابدين (رد المحتار) (5 / 656):
"(وما هلك من مال المضاربة يصرف إلى الربح) ؛ لأنه تبع (فإن زاد الهالك على الربح لم يضمن) ولو فاسدة من عمله؛ لأنه أمين". فقط و الله أعلم


ماخذ :دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
فتوی نمبر :144109202965
تاریخ اجراء :20-05-2020

PDF ڈاؤن لوڈ