1. دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
  2. حقوق و معاشرت
  3. اخلاق / آداب
  4. اٹھنے ، بیٹھنے ، چلنے پھرنے کے آداب

فجر کے بعد سونے کا حکم

سوال

کیاصبح  کی  نماز کے فورًابعد نیند کرناحرام ہے؟ 

جواب

فجر  کی  نماز  کے  بعد  بغیر  کسی  ضرورت  کے طلوعِ آفتاب سے  پہلے سونا مکروہ  ہے، حرام نہیں ہے۔

مستحب یہ ہے کہ صبح صادق (یعنی فجر کا وقت داخل ہونے) سے لے کر سورج طلوع ہوکر اشراق کا وقت ہونے تک آدمی جاگتا رہے، اور اس پورے وقت میں اللہ تعالیٰ کی طرف متوجہ رہے، فجر کی نماز کی ادائیگی کے ساتھ ذکر و تلاوت، استغفار و دعا میں مشغول رہے، اور اشراق کا وقت ہوجانے کے بعد اشراق کی نماز ادا کرکے پھر ضرورت ہو تو سوجائے، اس لیے کہ از روئے روایات  فجر کی نماز کا مکمل وقت ارزاق وغیرہ  کی تقسیم کا وقت ہے، اس میں اللہ تعالیٰ کی طرف متوجہ ہوکر برکت اور خیر کی دعا اور ذکر میں مشغول رہنا چاہیے۔ تاہم اگر کسی وجہ سے رات میں نیند  نہ کرسکا ہو اور دن میں نیند کرنے کا موقع نہ ہو، یا کوئی عذر ہو تو فجر کی نماز اپنے وقت میں ادا کرنے کے بعد  سونا ممنوع نہیں ہے۔

الفتاوى الهندية (5/ 376):

"ويكره النوم في أول النهار وفيما بين المغرب والعشاء".

وفیه أيضًا:

"ولایتکلم بعد الفجر إلى الصلاة إلا بخير، وقیل: بعدها أيضًا إلى طلوع الشمس". (5/380)

فقط والله  اعلم


ماخذ :دار الافتاء جامعۃ العلوم الاسلامیۃ بنوری ٹاؤن
فتوی نمبر :144209202389
تاریخ اجراء :10-05-2021

فتوی پرنٹ