1. دار الافتاء دار العلوم دیوبند
  2. متفرقات
  3. دیگر

معزز علماء کرام کیا ایسے شخص کو مسلمانوں کی جماعت کا یا مسلمانوں کے کسی دینی مشورہ کا امیر بنانا درست ہے جو اسلام و مسلم دشمن پارٹی بی جے پی کے کامیابی کے لئے لوگوں سے ووٹ مانگتا ہوں اور ووٹ دینے والوں میں مال تقسیم کرتا ہ

سوال

معزز علماء کرام کیا ایسے شخص کو مسلمانوں کی جماعت کا یا مسلمانوں کے کسی دینی مشورہ کا امیر بنانا درست ہے جو اسلام و مسلم دشمن پارٹی بی جے پی کے کامیابی کے لئے لوگوں سے ووٹ مانگتا ہوں اور ووٹ دینے والوں میں مال تقسیم کرتا ہوں؟

جواب


بسم الله الرحمن الرحيم Fatwa ID: 136-136/B=2/1437-U
اگر سائل اپنے سوال میں صحیح اور سچا ہے تو ایسا شخص اس قابل نہیں کہ وہ مسلمانوں کی جماعت کا دینی مشیر یا امیر ہو ایسے شخص کی رائے پر اعتماد کرنا جائز نہیں۔
---------------------------------------
جواب درست ہے بہ شرطے کہ یہ شخص بھی اسلام دشمن ذہنیت رکھتا ہو، اگر مذکور فی السوال پارٹی میں شمولیت کی کوئی خاص مصلحت یہ شخص بیان کرتا ہے تو اس کی وضاحت پر حکم بدل سکتا ہے۔
واللہ تعالیٰ اعلم
دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند


ماخذ :دار الافتاء دار العلوم دیوبند
فتوی نمبر :62129
تاریخ اجراء :Dec 12, 2015

PDF ڈاؤن لوڈ