1. دار الافتاء دار العلوم دیوبند
  2. معاملات
  3. سود و انشورنس

کیا انٹرسٹ سود کا چیک کرنا درست پیشہ ہے؟

سوال

کیا انٹرسٹ سود کا چیک کرنا درست پیشہ ہے؟

جواب


بسم الله الرحمن الرحيم Fatwa ID: 164-164/B=3/1437-U
حدیث شریف میں آیا ہے کہ سود کھانے والے پر کھلانے والے پر سودی حساب لکھنے والے پر سود کی شہادت دینے والے پر رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے لعنت فرمائی ہے، سودی حساب کا چیک کرنا بھی حسباب ہی کرنے میں داخل ہے، اس لیے سودی ادارے میں حساب کو چیک کرنا بھی حساب کرنے والوں میں شمار ہوتا ہے، لہٰذا مسلمان کے لیے یہ کام یعنی سودی ادارے میں حساب وکتاب لکھنا یا اس کو چیک کرنا یہ سب ناجائز امور ہیں، ناجائز کام کرکے اس کی اجرت وتنخواہ لینا بھی ناجائز ہے۔
واللہ تعالیٰ اعلم
دارالافتاء،
دارالعلوم دیوبند


ماخذ :دار الافتاء دار العلوم دیوبند
فتوی نمبر :62462
تاریخ اجراء :Dec 21, 2015

PDF ڈاؤن لوڈ