1. دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
  2. مساجد و مدارس

ہمارے شہر میں اس طرح کی مسجدوں کا رواج اوپر بلڈنگ یا دکان وغیرہ ہوتا ہے اور نیچے مسجد تو کیا یہ شرعی مسجد کہلائے گی

سوال

السلام عليكم ورحمة الله وبركاته

ہمارے شہر میں اس طرح کی مسجدوں کا رواج اوپر بلڈنگ یا دکان وغیرہ  ہوتا ہیں اور نیچے مسجد تو کیا یہ شرعی مسجد کہلائے گی
 با حوالہ جواب عنایت فرمایے نوازش و احسان ہوگا

جواب

Ref. No. 41/841

الجواب وباللہ التوفیق 

بسم اللہ الرحمن الرحیم:۔ اگر وہ زمین پوری مسجد کے لئے وقف ہے اور مسجد بنائے جانے سے پہلے ہی نیچے یا اوپر کرایہ کے لئے مکان یا دوکان بنائی جائے اور اس کا کرایہ مصالح مسجد میں استعمال ہو تو اس طرح کرنے کی گنجائش ہے۔ اگر زمین مسجد کے لئے وقف نہیں ہے یا اوپر کی دوکان مصالح مسجد کے لئے نہیں ہے تو یہ نماز گاہ کے حکم میں ہے ،یہ  شرعی مسجد نہیں کہلائے گی۔

 لوبنی فوقہ بیتا للامام لایضر لانہ من المصالح ، اما لو تمت المسجدیۃ ثم اراد البناء منع (شامی ۴/۳۵۸ فرع بناء بیتا للامام فوق المسجد)   

واللہ اعلم بالصواب

 

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند


ماخذ :دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
فتوی نمبر :1771
تاریخ اجراء :Oct 8, 2019

PDF ڈاؤن لوڈ