1. دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
  2. احکام میت / وراثت و وصیت

ایک عورت کاایک حادثہ میں اکتقال ہوگیا اور اس کی تدفین ہوگئی۔ اہل خانہ پوسٹ مارٹم نہیں چاہتے۔ اب پولس اس کو کھودکر نکال کر پوسٹ مارٹم کرانا چاہتی ہے تو کیا اس قبر کی لاش کو نکال کر چپکے سے کسی دوسری جگہ منتقل کیا جاسکتاہے؟

سوال

ایک عورت کاایک حادثہ میں اکتقال ہوگیا اور اس کی تدفین ہوگئی۔ اہل خانہ پوسٹ مارٹم نہیں چاہتے۔ اب پولس اس کو کھودکر نکال کر پوسٹ مارٹم کرانا چاہتی ہے تو کیا اس قبر کی لاش کو نکال کر چپکے سے کسی دوسری جگہ منتقل کیا جاسکتاہے؟

جواب

Ref. No. 39/1144

الجواب وباللہ التوفیق 

بسم اللہ الرحمن الرحیم:۔   کیا ضروری ہے کہ پولس وہاں تک نہ پہنچ سکے، اور ایسا کرنے میں کچھ اور لوگ بھی مجرم قرار پاسکتے ہیں، اس لئے ایسا نہیں کرنا چاہئے۔ تاہم اگر انتظامیہ سے ہی صلح کرکے میت کے بچانے کی کوشش کیجائے تو بہتر ہے۔

واللہ اعلم بالصواب

 

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند

 


ماخذ :دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
فتوی نمبر :1345
تاریخ اجراء :Aug 7, 2018,

فتوی پرنٹ