1. دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
  2. زکوۃ / صدقہ و فطرہ

ایک آدمی زکوٰۃ اپنے مال کی نکالتا ہے لیکن نام اپنے مرحوم ابا کا لکها تا هے کیا ایسا کرنا صحیح ہے؟اگر صحیح ہے تو کیا اس کا ثواب اپنے مرحوم ابا کو ملے گا؟ برائے مہربانی جواب تحریر فرمائیں

سوال

Ref. No. 937

ایک آدمی زکوٰۃ اپنے مال کی نکالتا ہے لیکن نام اپنے مرحوم ابا کا لکها تا هے  کیا ایسا کرنا صحیح ہے؟اگر صحیح ہے تو کیا اس کا ثواب اپنے مرحوم ابا کو ملے گا؟  برائے مہربانی جواب تحریر فرمائیں

جواب

Ref. No. 932 Alif

الجواب وباللہ التوفیق                                                                                                                                                        

بسم اللہ الرحمن الرحیم: اگر نیت اپنے مال کی زکوۃ نکالنے کی ہے، تو دوسرے کا نام لکھوانے سے کوئی فرق نہیں پڑتا، زکوۃ ادا ہوجائے گی اور ثواب اسی کو ملے گا جس نے اپنی زکوۃ اداکی ہے۔ والد مرحوم کو بھی  اگر  ثواب پہنچائے تواس میں  کوئی حرج نہیں ہے۔ والد مرحوم کے ایصال ثواب کے لئے نفلی صدقہ بھی کرتا رہے۔ واللہ اعلم بالصواب

 

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند


ماخذ :دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
فتوی نمبر :571
تاریخ اجراء :Feb 11, 2016,

فتوی پرنٹ