1. دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
  2. نکاح و شادی

جناب مفتی اعظم صاحب دارالعلوم وقف دیوبندگذارش ہے کہ میرا چھوٹا بھائی محمد امجد غلط صحبت کی وجہ سے ایک غیر مسلم لڑکی سے ہندو رسم و رواج کے مطابق شادی کرنا چاہتا ہے۔ لڑکی کو مسلمان کرکے نکاح کرنے کے لئے لڑکا تیار نہیں ہے۔ ہم

سوال

Ref. No. 1030

جناب مفتی اعظم صاحب دارالعلوم وقف دیوبند
گذارش ہے کہ میرا چھوٹا بھائی محمد امجد غلط صحبت کی وجہ سے ایک غیر مسلم لڑکی سے ہندو رسم و رواج کے مطابق شادی کرنا چاہتا ہے۔ لڑکی کو مسلمان کرکے نکاح کرنے کے لئے لڑکا تیار نہیں ہے۔ ہم سب لوگوں نے اس سلسلہ میں بہت کوشش کی سمجھانے بجھانے کی ، لیکن وہ کسی صورت میں صحیح راستہ پر آنے کے لئے تیار نہیں ہے۔ براہ مہربانی اس بارے میں شریعت کے حکم سے آگاہ فرمایا جائے تاکہ یہ حکم اس کو دکھاکر صحیح راستہ پر اسے لانے کی کوشش کریں۔
ایم اے سید
موہالی، چندی گڈھ

جواب

Ref. No. 978

الجواب وباللہ التوفیق

کسی مسلمان لڑکے کا نکاح کسی ہندو لڑکی  کے ساتھ جائز ومنعقد نہیں ہوتا۔ قرآن کریم میں ہے: ولا تنکحوا المشرکات حتی یؤمن الآیۃ ۔۔ وکذا فی الدرالمختار۔ لہذا مذکورہ نکاح بالکل ناجائز و حرام ہے، نکاح منعقدہی  نہیں ہوگا۔ بہتر ہے کہ مذکورہ شخص کو اس گناہ کبیرہ اور اس پر مرتب ہونے والے اللہ کے غضب سے متعلق خوب اچھے انداز میں سمجھایا جائے ؛اللہ کرے کہ وہ باز آجائے۔ واللہ تعالی اعلم

دارالافتاء

دارالعلوم وقف دیوبند


ماخذ :دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
فتوی نمبر :89
تاریخ اجراء :Sep 8, 2014,

فتوی پرنٹ