1. دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
  2. بدعات و منکرات

(۴۳) سوال:دین اسلام کا علم رکھنے والا، دین اسلام کے قوانین کو توڑ مروڑ کر پیش کرے، اور سیدھے سادھے لوگوں کو گمراہ کرے اور عقل سلیم رکھنے والے جان بوجھ کر گمراہ کرنے والوں کا ساتھ دیں تو اس کو اور اس کا ساتھ دینے والے کو شر

سوال

(۴۳) سوال:دین اسلام کا علم رکھنے والا، دین اسلام کے قوانین کو توڑ مروڑ کر پیش کرے، اور سیدھے سادھے لوگوں کو گمراہ کرے اور عقل سلیم رکھنے والے جان بوجھ کر گمراہ کرنے والوں کا ساتھ دیں تو اس کو اور اس کا ساتھ دینے والے کو شریعت کیا کہتی ہے؟
    فقط: والسلام
المستفتی: نعمت اللہ
مومن پورہ، ناگپور

جواب

الجواب وباللّٰہ التوفیق:ایسا کرنے والا سخت گناہگار ہے اور اعانت علی المعصیت کا شکار ہے، اس پر توبہ لازم ہے۔(۱)

 

(۱) من اعتقد الحرام حلالاً أو علی القلب یکفر، أما لو قال لحرام ہذا حلال لترویج السلعۃ أوبحکم الجہل لا یکون کافراً۔ (جماعۃ من علماء الہند، الفتاویٰ الہندیۃ، ’’کتاب السیر: الباب التاسع: في أحکام المرتدین، موجبات الکفر أنواع، ومنہا: ما یتعلق بالحلال والحرام‘‘: ج ۲، ص: ۲۸۴)

{مَا یَلْفِظُ مِنْ قَوْلٍ إِلَّا لَدَیْہِ رَقِیْبٌ عَتِیْدٌہ۱۸} (سورۃ قٓ: ۸۱)


ماخذ :دار الافتاء دار العلوم (وقف) دیوبند
فتوی نمبر :4010
تاریخ اجراء :Sep 29, 2021

فتوی پرنٹ