والدین کی قضا نمازوں اور روزوں کا فدیہ صدقہ سے ادا کرنا

سوال کا متن:

مرحوم والدین کی قضا کے نماز و روزہ کیسے ادا کریں؟ علاوہ ازیں کیا والدین کی نماز و روزہ کا فدیہ صدقہ کی رقم سے ادا کیا جا سکتا ہے؟

جواب کا متن:

مرحوم والدین کی قضا کے نمازوں اور روزوں کے فدیہ کی تفصیل یہ ہے کہ اگر انہوں نے ان نمازوں اور روزوں کا فدیہ ادا کرنے کی وصیت کی ہے تو ان کے ترکہ (میراث) سے تجہیز وتکفین کے اخراجات اور قرضے نکالنے کے بعد بچ جانے والے مال کی ایک تہائی تک فدیہ دینا لازم اور ضروری ہے۔ اور اگر انہوں نے فدیہ کی وصیت نہیں کی تو ان کے ورثا اور رشتہ داروں کے ذمے فدیہ دینا لازم تو نہیں، لیکن اگر وہ فدیہ دیدیں تو یہ ان کے ساتھ احسان ہوگا اور اللہ تعالیٰ سے امید ہے کہ وہ برئ الذمہ ہوجائیں گے۔  ایک روزے کا فدیہ صدقۃ الفطر کی مقدار یعنی سوا دو کلو گندم یا سوا دو کلو گندم کا خالص آٹا یا اس کی   قیمت ہے۔ ایک نماز کا فدیہ بھی یہی ہے۔ واضح رہے کہ عشاء کی فرض نماز اور وتر کا فدیہ الگ الگ دینا ہوگا۔

زکوۃ اور صدقاتِ واجبہ کی رقم فدیہ میں دینا جائز نہیں، البتہ نفل صدقات کی رقم دی جا سکتی ہے۔


حوالہ جات

۔


مجيب
عبداللہ ولی
مفتیان
سیّد عابد شاہ صاحب
محمد حسین خلیل خیل صاحب
ماخذ :دار الافتاء جامعۃ الرشید کراچی
فتوی نمبر :81022
تاریخ اجراء :2023-08-13