1. دار الافتاء جامعۃ الرشید کراچی
  2. فتاوی

مجسمہ(ڈمی)کی شرعی حیثیت

سوال

ڈمی جس پر ریڈی میڈ کپڑے لگائے جاتے ہیں ،اس کا تفصیلی حکم درکار ہے۔

جواب

اگرمجسمہ( ڈمی) مرد کی ساخت کا ہو اور اس کی ہیئت ایسی ہوکہ اس کا سر کٹا ہوا ہو،یا چہرہ اتنا مسخ کر دیا گیا ہو کہ چہرے کے نقوش واضح نہ ہوں تو اس کے استعمال کی گنجائش ہے۔لیکن اگرمجسمہ( ڈمی) عورت کا ہے تو اس کے استعمال کے جائز ہونے کے لیے یہ بھی ضروری ہے کہ اس کے باقی جسم کے خدوخال واضح نہ ہوں۔ اگر اسے پہنایا گیا لباس اتنا چست ہو کہ جس کی وجہ سے اس کے جسم کے خدوخال نمایاں نظر آئیں تو اس کا استعمال جائز نہیں۔
حوالہ جات
قال الإمام النسائی رحمہ اللہ:عن أبي هريرة رضی اللہ عنہ قال: استأذن جبريل عليه السلام على النبي صلى الله عليه و سلم، فقال: ادخلِ، فقال:كيف أدخل،وفي بيتك ستر فيه تصاوير؟فإما أن تقطع رءوسها،أو تجعل بساطا يوطأ، فإنا معشر الملائكة، لا ندخل بيتا فيه تصاوير.(سنن النسائی:8/216)
قال الإمام الطحاوی رحمہ اللہ:عن أبی ھریرۃ رضی اللہ عنہ قال: الصورۃ الرأس،فکل شیء لیس لہ رأس ،فلیس بصورۃ.(شرح معانی الآثار:2/366)
قال الإمام الکاسانی رحمہ اللہ: فإن كانت مقطوعة الرؤوس... ؛لإنها بالقطع خرجت من أن تكون تماثيل ،التحقت بالنقوش.(بدائع الصنائع:1/115)
قال العلامۃ ابن نجیم رحمہ اللہ:قوله:(مقطوع الرأس): أي سواء كان من الأصل، أو كان لها رأس ومحي.....وفي الخلاصة:وكذالومحى وجه الصورة، فهو كقطع الرأس.(البحرالرائق:2/30)
قال العلامۃ ابن عابدین الشامی رحمہ اللہ:قولہ:(مقطوعۃ الرأس):أی سواء كان من الأصلِ، أو كان لها رأس ومحي.(رد المحتار:1/647)
قال العلامۃ ابن نجیم رحمہ اللہ:وقالوا: ولا بأس بالتأمل في جسدها ،وعليها ثياب ما لم يكن ثوب بيان حجمها، فلا ينظر إليه حينئذ ؛لقوله عليه الصلاة والسلام: «من تأمل خلف امرأة من وراء ثيابها حتى تبين له حجم عظامها، لم يرح رائحة الجنة».وإذا كان الثوب لا يصف عظامها،فالنظر إلى الثوب دون عظامها، فصار كما لو نظر إلى خيمة فيها، فلا بأس به.(البحرالرائق:8/218)

مجيب
محمد تنویر الطاف صاحب
مفتیان
مفتی ابولبابہ شاہ منصور صاحب
مفتی شہبازعلی صاحب


ماخذ :دار الافتاء جامعۃ الرشید کراچی
فتوی نمبر :56330
تاریخ اجراء :2016-11-19

PDF ڈاؤن لوڈ