1. دار الافتاء جامعہ عثمانیہ پشاور

مناسخہ كی ايك صورت

سوال

ہماری والدہ (گل خیمہ)فوت ہوچکی ہے،اس کےورثامیں سےشوہر(محمداسلم)،چاربیٹے(ثناءاللہ،شوکت اللہ،سمیع اللہ، شفقت اللہ)اورایک بیٹی(اخترنسا)زندہ تھی۔پھراس کےبعد ہمارےوالد(محمداسلم)کاانتقال ہوا ، اس کےورثامیں سےایک بیوہ(آمنہ)چھ بیٹے(ثناءاللہ،شوکت اللہ،سمیع اللہ، شفقت اللہ،سلیم،شمیم)، اور چار بیٹیاں(اخترنسا،شبنم،ثریا،نسرین) زندہ تھیں۔پھراس کےبیٹے(ثناءاللہ)کاانتقال ہوا،اس کےورثامیں سےدوبیوہ(شوکت بی بی،نورصنم)اورایک بیٹا(نویداللہ)زندہ تھا۔پھراس کےدوسرےبیٹے(شوکت اللہ)کاانتقال ہوا،اس کےورثامیں سےایک بیوہ(مرینہ بیگم)،اورچاربیٹے(سعیداللہ، وحیداللہ،زاہداللہ،تقدیراللہ اورشاکراللہ)زندہ ہیں۔اب مرحومہ گل ضیمہ کاترکہ مذکورہ بالاورثامیں شرعاکس طرح تقسیم ہوگا؟ 

جواب

میـــــ(گل خیمہ)ـــــ(61440)ــــــــــــــــــــــــت

   شوہر        بیٹا          بیٹا          بیٹا          بیٹا         بیٹی                 

محمداسلم    ثناءاللہ    شوکت اللہ    سمیع اللہ    شفقت اللہ   اخترنسا

                                        10240   10240     5120              

میــ(محمداسلم)ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ۔۔۔۔

   بیوہ       بیٹا      بیٹا         بیٹا          بیٹا           بیٹا     بیٹا      بیٹی             

  آمنہ     ثناءاللہ  شوکت اللہ  سمیع اللہ  شفقت اللہ    سلیم    شمیم    اخترنسا

1920                          1680    1680        1680  1680   840

۔۔۔ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــت 

   بیٹی               بیٹی               بیٹی

  شبنم                ثریا              نسرین

  840              840             840

میـــ(ثناءاللہ)ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــت

    بیوہ                      بیوہ                        بیٹا

شوکت بی بی           نورصنم                    نویداللہ 

  745                    745                    10430   

 میـــ(شوکت اللہ)ــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــت

     بیوہ        بیٹا        بیٹا         بیٹا        بیٹا          بیٹا     

مرینہ بیگم  سعیداللہ    وحیداللہ    زاہداللہ   تقدیراللہ     شاکراللہ

  1490    2086    2086      2086       2086     2086

الأحیـــــــــــــــ(61440)ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــ۔۔۔۔

 سمیع اللہ    شفقت اللہ  اخترنسا    آمنہ     سلیم     شمیم    شبنم    ثریا   نسرین            

11920    11920     5960    1920    1680 1680  840  840   840                                    

۔۔۔ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــــاء

شوکت بی بی  نورصنم   نویداللہ    مرینہ بیگم   سعیداللہ    وحیداللہ    زاہداللہ  تقدیراللہ  شاکراللہ

  745           745    10430   1490      2086         2086    2086  2086   2086 

بشر ط صدق وثبوت اگرگل خیمہ مرحومہ کےمذکورہ بالاورثا کےعلاوہ اورکوئی قریبی وارث زندہ موجودنہ ہواوراموات بھی درجہ بالاترتیب  سےہوئی ہوں توبعدازادائےحقوق متقدمہ علی الارث مرحومہ کاترکہ اکسٹھ ہزارچارسوچالیس (61440)حصوںمیں تقسیم کرکےسمیع اللہ،شفقت اللہ میں سےہرایک کو61440/11920حصے،اخترنساکو 61440/5920حصے،آمنہ کو1920/61440حصے،سلیم،شمیم میں سےہرایک کو61440/1680حصے،شبنم  ، ثریا،نسرین  میں سےہرایک کو840/61440حصے،شوکت بی بی  نورصنم میں سےہرایک کو61440/745حصے، نویداللہ کو10430/61440حصے،مرینہ بیگم کو1490/61440حصے، جب کہ سعیداللہ،وحیداللہ،زاہداللہ،تقدیراللہ اورشاکراللہ میں سےہرایک کو 2086/61440حصےملیں گے۔

 

قال الله تعالى:﴿يُوصِيكُمُ اللَّهُ فِي أَوْلَادِكُمْ لِلذَّكَرِ مِثْلُ حَظِّ الْأُنْثَيَيْنِ﴾[النساء:11]

وقال تعالی:﴿فَإِنْ كَانَ لَهُنَّ وَلَدٌ فَلَكُمُ الرُّبُعُ مِمَّا تَرَكْنَ مِنْ بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصِينَ بِهَا أَوْ دَيْن﴾[أيضا:12]

وقال تعالی:﴿فَإِنْ كَانَ لَكُمْ وَلَدٌ فَلَهُنَّ الثُّمُنُ مِمَّا تَرَكْتُمْ﴾[أيضا:12]

العصبات النسبية ثلاثة: عصبة بنفسه، وعصبة بغيره، وعصبة مع غيره. أما العصبة بنفسه: كل ذكر لاتدخل في نسبة إلى الميت أنثى وهم أربعة أصناف جزء الميت...أي البنون. (السراجي فى الميراث، باب العصبات، أحوال العصبة بنفسه، ص:36، البشرى)


ماخذ :دار الافتاء جامعہ عثمانیہ پشاور
فتوی نمبر :14431809


فتوی پرنٹ