1. دار الافتاء جامعہ عثمانیہ پشاور

شوہراوردوبیٹوں کےدرمیان تقسیمِ میراث

سوال

ایک عورت(روبینہ بی بی)فوت ہوئی ہے،جس کےورثامیں شوہر(اکرم خان)،اوردوبیٹے(امجدخان اوراسلم خان)شامل ہیں،اب مرحومہ کاترکہ مذکورہ ورثاکےدرمیان شرعاکس طرح تقسیم ہوگا؟

جواب

میـــ(روبینہ بی بی)(8)ـــــــــــــــــــــــــــــــــــــــت

      شوہر                       بیٹا                         بیٹا      

   اکرم خان                 امجدخان                  اسلم خان     

                         2         3          3                        

بشرط صدق وثبوت اگرمرحومہ (روبینہ بی بی)کےمذکورہ بالاورثاکےعلاوہ کوئی اورقریبی وارث زندہ موجودنہ ہو،توبعدازادائےحقوق متقدمہ علی الارث مرحومہ(روبینہ بی بی)کاکل ترکہ آٹھ(8)حصوں میں تقسیم کرکےشوہر(اکرم خان) کو2/8حصے، اوردوبیٹوں(امجدخان اوراسلم خان)میں سےہرایک کو3/8حصے ملیں گے۔

 

وقال تعالی:﴿فَإِنْ كَانَ لَهُنَّ وَلَدٌ فَلَكُمُ الرُّبُعُ مِمَّا تَرَكْنَ مِنْ بَعْدِ وَصِيَّةٍ يُوصِينَ بِهَا أَوْ دَيْنٍ﴾۔(النساء:12)

أماالعصبةبنفسه :فکل ذکرلاتدخل فی نسبته إ لی المیت أنثی،وھم أربعۃ أصناف:جزءالمیت،ؤصله،وجزء أبیه،وجزءجده،الأقرب فالأقرب،یرجحون بقرب الدرجة،یعنی أولاھم بالمیراث جزءالمیت أي البنون ثم بنوھم وإن سفلوا...(السراجي في المیراث،باب العصبات،ص36)


ماخذ :دار الافتاء جامعہ عثمانیہ پشاور
فتوی نمبر :14431781


فتوی پرنٹ