1. دار الافتاء جامعہ عثمانیہ پشاور

تین بیٹیوں اورایک بہن کےدرمیان تقسیم میراث

سوال

ایک شخص (محمدجہانگیر)فوت ہواہے،جس کےورثامیں تین بیٹیاں (شازیہ،بشری اورنوشی )اورایک بہن (عالم آراء)شامل ہیں،اب مرحوم کاترکہ مذکورہ ورثاکےدرمیان شرعاکس طرح تقسیم ہوگا؟

جواب

میـــ(محمدجہانگیر)(9)ـــــــــــــــــــــــــــــــــــت

 بیٹی               بیٹی                بیٹی                بہن

شازیہ            بشرٰی               نوشی           عالم آراء

 2                  2                   2                  3

            بشرط صدق وثبوت اگرمرحوم(محمدجہانگیر)کےمذکورہ بالاورثاکےعلاوہ کوئی اورقریبی وارث زندہ موجودنہ ہو،توبعدازادائےحقوق متقدمہ علی الارث مرحوم(محمدجہانگیر)کاکل ترکہ نو(9)حصوں میں تقسیم کرکےتین بیٹیوں(شازیہ،بشری اورنوشی)میں سےہرایک کو2/9حصےاوربہن(عالم آراء)کو3/9حصےملیں گے۔

 

قال اللہ تعالی:﴿فَإِنْ كُنَّ نِسَاءً فَوْقَ اثْنَتَيْنِ فَلَهُنَّ ثُلُثَا مَا تَرَكَ﴾(النسآء:11)

ولھن الباقی مع البنات أوبنات الابن.(السراجی فی المیراث،ص:25)


ماخذ :دار الافتاء جامعہ عثمانیہ پشاور
فتوی نمبر :14431820


فتوی پرنٹ