1. دار الافتاء جامعہ عثمانیہ پشاور

ایک بیوہ اورایک بھائی کے درمیان تقسیم میراث

سوال

وزیر اکبر فوت ہوا ہے، اس کے ورثا میں ایک بیوہ( نثار بیگم ) ایک بھائی ( زیرگل) زندہ موجود ہیں ،اس کے علاوہ مرحوم کے بھتیجے اور بھتیجیاں بھی ہیں ، ان کے مابین  تقسیم میراث کس طرح ہوگی؟کیا اس صورت میں بھتیجوں اور بھتیجیوں کا میراث میں حصہ بنتا ہے یانہیں؟

جواب

میــ(وزیر اکبر)(4)ـــــــــــــــــــــــــــــــــــت

             بیوہ                                       بھائی

          نثار بیگم                                   زیرگل

             1                                           3

          بشرط صدق وثبوت اگر مرحوم کے مذکورہ بالا ورثا کے علاوہ کوئی اور قریبی وارث زندہ موجود نہ ہو توبعد از حقوق  متقدمہ علی الارث مرحوم کا  ترکہ چار(4)حصوں میں تقسیم کرکےبیوہ(نثار بیگم)کو1/4حصہ اور بھائی(زیرگل) کو3/4حصے دیے جائیں گے،مرحوم کےبھتیجوں اور بھتیجیوں کا میراث میں کوئی حصہ نہیں  بنتا۔

 

قال الله تعالى:﴿ وَلَهُنَّ الرُّبُعُ مِمَّا تَرَكْتُمْ إِنْ لَمْ يَكُنْ لَكُمْ وَلَدٌ ﴾۔[النساء:12]

أماالعصبة بنفسه ۔۔۔ وهم أربعة أصناف جزءالميت وأصله وجزءأبيه وجزءجده ،الأقرب فالأقرب يرجحون بقرب الدرجة أعني أولٰهم بالميراث ۔۔۔۔۔ ثم جزء أبيه أي الإخوة ثم بنوهم وإن سفلوا۔(السيراجي في الميراث،باب العصبات،ص:16)


ماخذ :دار الافتاء جامعہ عثمانیہ پشاور
فتوی نمبر :14431816


فتوی پرنٹ